عمران خان میاں نوازشریف کی جیل میں عیادت کے لئے جاسکتے ہیں ، وفاقی وزیر کا بڑا انکشاف

پاکستان تحریک انصاف کی قیادت نے واضح کیا ہے کہ وزیراعظم عمران خان اپوزیشن کا رویہ بہتر ہونے کے بعد میاں نوازشریف کی عیادت کے لئے جیل میں ملاقات کرنے کے لئے جا سکتے ہیں –

اس حوالے سے وفاقی وزیر تعلیم اور لاہور سے رکن قومی اسمبلی شفقت محمود نے ذرائع ابلاغ کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس وقت اپوزیشن کا رویے سے قومی اسمبلی میں تلخی کی فضا ہے جب تلخی کی فضا نیچے جائے گی، حالات بہتر ہوں گے تو پھر اس کے بعد عمران خان میاں نوازشریف کی عیادت کے لیے جا سکتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ میاں نواز شریف کی علالت کی وجہ سے جو آفر حکومت نے کی ہے قانون کے مطابق اس سے زیادہ آفر کوئی حکومت نہیں کر سکتی کہ پاکستان کے جس بھی اسپتال میں چاہیں علاج کروائیں یا لندن سے اپنا ڈاکٹر منگوا لیں حکومت نے جو اقدامات کیے سیاست سے ہٹ کر کیے ہیں۔

وفاقی وزیر تعلیم کا کہنا تھا کہ نواز شریف کے بیرون ملک علاج کا معاملہ حکومت کے اختیار میں نہیں ہے ،ن لیگ نواز شریف کو بیرون ملک لے جانا چاہتی ہے تو عدالت میں جائے، نوازشریف کو دل کے ساتھ گردوں، بلڈ پریشرا ور شوگر کی بیماریاں بھی ہیں، حکومت نے سابق وزیراعظم کو ایسے اسپتالوں میں بھیجا جہاں تمام بیماریوں کا علاج ہوتا ہو، حکومت نے نواز شریف کو پاکستان میں کسی بھی اسپتال میں علاج کی پیشکش کی ہے۔ بھیجا جہاں تمام بیماریوں کا علاج ہوتا ہو، حکومت نے نواز شریف کو پاکستان میں کسی بھی اسپتال میں علاج کی پیشکش کی ہے۔

شفقت محمود کی جانب سے یہ بیان سامنے آنے کے بعد حکومت اور اپوزیشن کے مابین تلخیاں کم ہونے کا قوی امکان ہے تاہم اس کا اندازہ آئند چند روز کے بعد ہی ہو گا –

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں