معاشی بحران ختم ، استحکام کی طرف جارہے ہیں ، اسد عمر نے قوم کو خوشخبری سنا دی

جب سے پاکستان تحریک انصاف کی حکومت قائم ہوئی ہے اس وقت سے ملک کی معاشی حالات خراب در خراب ہوتے رہے اور اب پہلی مرتبہ خوشخبری ملی ہے کیونکہ وفاقی وزیرخزانہ اسد عمر نے کہا ہے کہ معاشی بحران ختم ہوگیا،اب استحکام کی طرف جا رہے ہیں،تین بڑے معاشی مسائل مالیاتی خسارہ ، کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ اور کم سرمایہ کاری ہیں، آئی ایم ایف سے معاہدہ آخری مراحل میں ہے،آئی ایم ایف سے مذاکرات میں ڈاکٹر حفیظ پاشا نے اہم کردار ادا کیا۔

اسلام آباد میں ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا ہے کہ ہم وہ کام نہیں کریں گے جس کا فائدہ آج سے تین سال ، پانچ سال یا 20سال بعد نظر آئے ، ہم نے معاشی فیصلے سیاست اور الیکشن کو دیکھ کرنہیں کرنے ہیں۔ میں 40سال پہلے یونیورسٹی میں اکنامکس پڑھنی شروع کی ، وہ باتیں تھیں، پاکستان برآمدات یا اتنا پیسا پیدا نہیں کرسکتا جس سے زرمبادلہ ذخائر بڑھے-

وفاقی وزیر خا کہنا تھا کہ پاکستان کے تین بڑے معاشی مسائل ہیں،جن میں مالیاتی خسارہ ، کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ اور کم سرمایہ کاری بنیادی ایشو تھے۔ ہم نے تینوں بنیادی مسائل کو حل کرنے کیلئے کام کا آغاز کرنا ہوگا۔ہمارے سفر کا آغاز2018ء میں ہوا۔ہمیں آئی سی یو میں جو مریض ملا تھا پہلے اس کی جان بچانا ضروری تھی۔معیشت آئی سی یو سے نکل آئی ہے کرائسز کا فیز ختم ہوگیا ہے۔شکر ہے کہ وہ فیصلے بھی ہوگئے، کچھ لوگوں نے ہمیں ڈرایا ، کچھ نے نیک نیتی سے کہا، کہ فوری آئی ایم ایف کے پاس جانا ہوگا۔

اسد عمر نے واضح کیا کہ اب کرائسز کا فیز ختم ہوگیا ہے۔انہوں نے کہا کہ آئی ایم ایف سے معاہدہ آخری مراحل میں ہے،آئی ایم ایف سے جو اعدادوشمار حاصل ہوں گے وہ فریم ورک میں شامل کیے جائیں گے۔آئی ایم ایف سے مذاکرات میں ڈاکٹر حفیظ پاشا نے اہم کردار ادا کیا۔انہوں نے کہا کہ 1960ء میں پاکستان ترقی یافتہ ملکوں میں شمار ہوتا تھا، لیکن ہانگ کانگ، سنگاپورہم سے آگے چلے گئے،تھائی لینڈ ، چین ، بنگلادیش ،بھارت اور ملائیشیاء ہم سے آگے نکل گئے۔

واضح رہے کہ گزشتہ روز وفاقی وزیر نے کہا تھا کہ اب ڈالر کی قیمت نہیں بڑے گی بلکہ روپیہ مضبوط ہو گا اس لئے سرمایہ کار انویسٹ کریں نہ کہ ڈالر خریدیں کیونکہ اب ڈالرز خریدنے والوں کو کچھ نہیں ملے گا اور دوسری بڑی خوشخبری عوام کو دی گئی ہے-

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں