رویت ہلال کمیٹی اور وزارت سائنس و ٹیکنالوجی کے اختلافات شدید ، 5 سال کیلئے کمیٹی قائم

رمضان المبارک کا آغا کیا ہوا ہے وزارت سائنس و ٹیکنالوجی اور رویت ھلال کمیٹی ایک دوسرے کے سامنے آ گئے ہیں اور یہ سلسلہ اس وقت شروع ہوا جبکہ وفاقی وزیرسائنس وٹیکنالوجی فواد چوہدری نے چاند دیکھنے کا معاملہ پر کہا کہ وہ ایک کمیٹی تشکیل دے رہے ہیں جو آئندہ کے 10 سالوں کا کیلنڈر تیار کرے گی جس میں رمضان المبار ، عیدین ، محرم الحرام سمیت دیگر مہینوں کے چاند کی تاریخ واضح ہو گی جس کے بعد رویت ھلال کمیٹی کے سربراہ مفتی منیب سامنے آ گئے ہیں اور انہوں نے وزیراعظم سے کہا کہ وہ وزرا کو روکیں کیونکہ انہیں نظام کی معلومات نہیں ہیں –

یہ اختلافات اب کھل کر سامنے آ گئے ہیں کیونکہ چاند کی رویت کا تنازع حل کرنے کیلئے کمیٹی قائم کردی گئی ہے جس کا اعلان سائنس اینڈ ٹیکنالوجی کے وفاقی وزیر فواد چوہدری نے کیا ہے، اور یہ اعلان انہوں نے اپنے ٹویٹر پر بیان جاری کرتے ہوئے کیا کہ کمیٹی کے قیام کا باضابطہ نوٹیفکیشن جاری کردیا گیا۔

فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ چاند کا تنازع حل کرنے کے لیے کمیٹی کا قیام عمل میں لایا چکا ہے جس کے سربراہ وزارت سائنس اینڈ ٹیکنالوجی کے جوائنٹ سائنٹفیک ایڈوائز ڈاکٹر محمد طارق مسعود ہونگے جبکہ کمیٹی کے دیگر ارکان میں محکمہ موسمیات سے ڈاکٹر وقار احمد، ندیم فیصل، ابو نسان اور سپارکو سے غلام مرتضیٰ شامل ہیں۔ نوٹیفکیشن میں یہ بھی واضح کیا گیا ہے کہ کمیٹی آئندہ 5 سال کے لیے قمری کیلنڈر تشکیل دے گی۔

اس حوالے سے رویت ہلال کمیٹی کی جانب سے ابھی کوئی موقف سامنے نہیں آیا-

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں