ماحول دوست اور سستی بجلی پیدا کرنے کیلئے بڑا قدم ، یونیورسٹی ماہرین کیا کرنے جارہے ہیں؟

فیصل آ باد(ویب ڈیسک) زرعی یونیورسٹی کے ماہرین سیوریج گارے سے بائیوگیس کی تیاری کے ساتھ ساتھ بائیو انرجی کا ایسا گیسی فی کیشن پلانٹ ڈیزائن کریں گے جس میں پلاسٹک‘ لکڑی اور سالڈ ویسٹ کواستعمال میں لاکر ماحول دوست اور سستی بجلی پیدا کی جا سکے گی۔

یہ باتیں زرعی یونیورسٹی فیصل آباد کے وائس چانسلرپروفیسرڈاکٹر محمد اشرف (ہلال امتیاز)نے جھنگ روڈ پنجاب بائیو انرجی انسٹی ٹیوٹ اور کمیونٹی کالج پارس کا دورہ کرتے ہوئے کہیں۔ ڈاکٹر محمد اشرف نے کہا کہ حکومت پنجاب نے پنجاب بائیوانرجی انسٹی ٹیوٹ کے قیام پر 77کروڑ سے زائد کی سرمایہ کاری کر رکھی ہے جسے عوامی سطح پر بجلی اور گیس کی کمی کو پورا کرنے کیلئے استعمال میں لایا جائے گا۔ انہوں نے ڈائریکٹر بائیو انرجی انسٹی ٹیوٹ ڈاکٹر احسان کو ہدایت کی کہ سیوریج گارے سے بائیوگیس پیدا کرکے کمیونٹی کی ضروریات پوری کرتے ہوئے عوام الناس میں اپنی موجودگی اور خدمات کا احساس پیدا کریں توکمیونٹی کی آسانی کے ساتھ ساتھ ادارے کی نیک نامی میں بھی اضافہ ہوگا۔

انہوں نے انسٹی ٹیوٹ کی طرف سے فیصل آباد سالڈ ویسٹ مینجمنٹ کمپنی کے ساتھ اشتراک عمل کو سراہتے ہوئے توقع ظاہر کی کہ اس کے ذریعے سالڈ ویسٹ کوبائیو انرجی کیلئے استعمال میں لانے کیلئے پائیدار بنیاد فراہم ہوگی۔ انہوں نے انسٹی ٹیوٹ کے ذمہ داران کو ہدایت کی کہ عملی نوعیت کی تحقیقات میں پیش رفت کریں تاکہ اس کے نتائج سے عوام الناس کے مسائل حل کرنے میں مدد لی جا سکے۔ انہوں نے پنجاب بائیو انرجی انسٹی ٹیوٹ کے ملازمین کی طرف سے رکی ہوئی تنخواہوں کے اجراء کے مطالبہ پر انہیں یقین دلایا کہ یونیورسٹی انتظامیہ ایسے تمام ملازمین کے حقو ق کا تحفظ کرتے ہوئے تنخواہوں کی ادائیگی کا بندوبست کرے گی۔ قبل ازیں کمیونٹی کالج کے دورہ کرے دوران انہوں نے کہا کہ پارس کیمپس کو تعلیمی و تحقیقی سرگرمیوں کا مرکز بنانے کیلئے یہاں ایف ایس سی کے بعد سائنسی مضامین میں چار سالہ ڈگر ی پروگرامزشروع کیا جائے گا۔ انہوں نے پرنسپل آفیسرکمیونٹی کالج ڈاکٹر حق نواز اور اساتذہ کو یقین دلایا کہ بنیادی ڈھانچے کی ترقی سمیت پارس کیمپس میں میڈیکل ڈاکٹر اور دوسری سہولیات کی فراہمی میں سنجیدہ پیش رفت کی جائے گی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں