عبدالعلیم خان کے لئےایک وقت میں 2 خوشخبریاں ، لیکن وہ ہیں کون کون سی؟؟

بڑے مشکل حالات کے بعد پاکستان تحریک انصاف کو ایک خوشی کی خبر ملی ہے جب سینئر رہنما اور سابق صوبائی وزیر عبدالعلیم خان کو جیل سے رہا کر دیا گیا ہے جس کے بعد انہیں پنجاب حکومت میں کوئی اعلی عہدہ دینے کا فیصلہ کیا گیا ہے جس پر سوچ بچار کی جارہی ہے –

آج پاکستان تحریک انصاف کے رہنما علیم خان کو کوٹ لکھپت جیل سے رہا کردیا گیا – اس حوالے سے شعیب صدیقی نے کہا علیم خان کے خلاف نیب کوئی ثبوت پیش نہ کرسکی، نیب قوانین میں ترامیم کی ضرورت ہے ۔ سابق سینئر صوبائی وزیر عبدالعلیم خان کی ضمانت ہونے
کے بعد انہیں پارٹی کے اندر اور حکومت میں کوئی اہم عہدہ دینے کے حوالے سے تحریک انصاف کی قیادت نے سر جوڑ لئے ، انہیں ان کے پرانے قلمدان ،سینئر صوبائی وزیر اورمحکمہ بلدیات کی وزارت ملنے یا پنجاب میں وفاق کا نمائندہ بنائے جانے کا امکان ہے ،لیکن کسی بھی عہدے کی پیشکش کے بعد عبدالعلیم خان کا اپنا فیصلہ کیا ہو گا اس پر کچھ کہنا قبل از وقت ہو گا۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق عبدالعلیم خان کی 6 فروری2019 کو گرفتاری سے لیکر اب تک سینئر صوبائی وزیر کا عہدہ خالی ہے تاہم بلدیات کی وزارت کااضافی چارج صوبائی وزیر قانون و پارلیمانی امور راجہ بشارت کو دیا گیا ، عبدالعلیم نے اپنی وزارت کے دوران نئے بلدیاتی نظام کے لئے غیر معمولی حد تک کام کیا جسے وزیر اعظم عمران خان نے بھی سراہا تھا اور عبدالعلیم خان کا ہی بنایا ہوا بلدیاتی بل پنجاب حکومت نے پنجاب اسمبلی سے منظور کر ایا۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق وزیر اعظم عمران خان کو عبدالعلیم خان کو ان کا پرانا عہدہ اوروزارت دینے میں کوئی اعتراض نہیں اور وہ انہیں دوبارہ سینئر صوبائی وزیر کا قلمدان سونپنا چاہتے ہیں لیکن اس کے علاوہ بھی کئی اعلی عہدے ہیں جس کے بارے میں غوروخوض کیا جارہا ہے –

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں