ٹیکس چوری پر پکڑنا ہے تو سب سے پہلے وزیراعظم کو ہتھکڑی لگائیں ، مسلم لیگ ن

پنجاب اسمبلی میں مسلم لیگ ن کے اپوزیشن لیڈر حمزہ شہباز کی گرفتاری پر رد عمل دیتے ہوئے سابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے کہا ہے کہ حمزہ شہباز نے رقم گوشواروں میں ظاہر کی تھی اگر ٹیکس چوری کی بات کرنی ہے تو سب سے پہلے وزیراعظم کو ہتھکڑی لگائیں۔ صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے واضح کیا کہ حمزہ شہباز پر 18 کروڑ ملک سے باہر جانے کا نہیں بلکہ ملک میں پیسے لانے کا الزام عائد ہے، منی لانڈرنگ ملک سے باہر جانے والے پیسے پر ہوتی ہے۔ یہ وہ پیسہ جو حمزہ شہباز نے اپنے تمام ٹیکس ریٹرنز میں شامل کیا ہے، یہ وہ پیسہ ہے جسے قومی اور اسمبلی کے رکن بننے کے وقت ظاہر کیا گیا اور الیکشن کمیشن میں جمع کروائے گئے گوشوارے میں یہ رقم موجود ہے۔

سابق وزیراعظم کا کہنا تھا کہ ہ آپ نے الزام لگانا ہے لگائیں لیکن عوام کے سامنے ثبوت رکھیں، فیصل واوڈا، جہانگیر ترین ، خسرو بختیار کا بھی احتساب کرلیں۔ کیونکہ کرپٹ لوگ اس وقت وزیراعظم کے دائیں بائیں بیٹھے ہیں اور جس چور نے پروٹیکشن حاصل کرنا ہے وہ پی ٹی آئی میں چلا جائے اسے نیب سمیت کوئی نہیں پوچھے گا۔ نیب نے حمزہ شہباز کو جتنے سوالنامے دیے وہ بھردیے، وہ ہر نیب کی پیشی پر شامل ہوئے، ایک دن کی بچی کا آپریشن چھوڑ کر آئے اور شامل تفتیش رہے، جب یہ کیس شروع ہوا تو نیب نے پریس کانفرنس کی اور بتایا کہ 87 ارب کی منی لانڈرنگ ہوئی ہے، پھر وہ 33 ارب کی ہوگئی اور آج بلآخر 18 کروڑ پر جا پہنچی ہے، یہ حقیقت ہے جو نیب کے حالات ہیں۔

شاہد خاقان عباسی نے واضح کیا کہ ٹیکس چوری کی بات کرنی ہے تو سب سے پہلے وزیراعظم کو ہتھکڑی لگائیں کہ کہاں سے پیسہ آتا ہے، کہاں سے ذاتی اخراجات پورے کرتے ہیں، وزرار بتائیں بجلی کے بل کیا ہیں، گاڑیوں کے خرچے کیا ہیں، ملازموں کو تنخواہ کون دیتا ہے۔ ہمیں نہ جیلوں کا ڈر ہے، ہم اپنا مقدمہ عوام کے سامنے رکھنا چاہتے ہیں، آج صرف نیب کا مقصد ہے کہ سیاست دان کو بدنام کیا جائے، جن لوگوں نے ملک کی خدمت کی ہے ان سے عوام کی نظر ہٹائی جائے۔

انہوں نے کہا کہ یہ کیس 2005 سے 2008 تک کا ہے جب ملک میں مشرف کی حکومت تھی اور حمزہ شہباز کسی اسمبلی کے رکن نہیں تھے، وہ ایک عام شہری تھی، جن 18 کروڑ کی بات کی گئی وہ ملک سے باہر جانے والے نہیں بلکہ ان کے ملک کے اندر آنے کا الزام ہے، کیا منی لانڈرنگ ملک سے اندر آنے والے پیسے پر ہوتی ہے؟ یہ وہ پیسہ ہے جو حمزہ نے ہر سال اپنے تمام ٹیکس ریٹرن میں دکھایا، یہ رقم چھپی ہوئی نہیں تھی۔

شاہد خاقان عباسی کے پریس کانفرنس کرتے ہوئے اراکین قومی اسمبلی احسن اقبال ، خواجہ آصف اور مسلم لیگ ن کی ترجمان مریم اورنگزیب بھی موجود تھیں –

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں