بھارت کسی بھی وقت جھوٹا آپریشن کر سکتا ہے؟؟؟ شاہ محمود قریشی نے خبردار کردیا

وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی نے بہت واضح الفاظ میں پوری پاکستانی قوم کو خبردار کیا ہے کہ بھارت کسی بھی وقت پاکستان کے خلاف جارحیت کر سکتا ہے جس سے عالمی برادری کو آگاہ کر رہے ہیں اس لئےقوم مکمل طور پر جارحیت سے نمٹنے کے لیے تیارر ہے – اسلام آباد میں کشمیر کی کمیٹی کے اجلاس کے اختتام پر میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ آج اجلاس میں گزشتہ روز کے ایک بہت بڑے ایونٹ کا ذکر ہوا جس سے بھارت چونک گیا ہے۔ ہم نے جس طرح مظفر آباد اور پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میں یکجہتی کا پیغام دیا تھا، آج بھی اسی طرح یکجہتی کا پیغام گیا ہے جس میں تمام اراکین کا کردار سامنے آیا ہے –

میڈیا رپورٹس کے مطابق وزیر خارجہ نے واضح کیاکہ ہم نے جس طرح مظفر آباد اور پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میں یکجہتی کا پیغام دیا تھا، آج بھی اسی طرح یکجہتی کا پیغام گیا ہے جس میں تمام اراکین کا کردار سامنے آیا ہے – انہوں نے اجلاس کو تاریخی قرار دیتے ہوئے کہا کہ 5 دہائیوں بعد مسئلہ کشمیر کو دنیا کے سب سے بڑے فورم پر اٹھایا گیا اور اس دوران اقوام متحدہ کی قراردادوں کی اہمیت اور سیکریٹری جنرل کے قیام کا تذکرہ ہوا جو بہت ہی حوصلہ افزا نشست تھی – بھارت کی بھرپور کوشش کے بعد سلامتی کونسل کا اجلاس منعقد ہونا پاکستان کی کامیابی ہے – سلامتی کونسل میں پاکستان نے ایک بہت بڑا معرکہ سر کیا ہے جس سے بھارت چونک گیا ہے – ہمیں اپنی حکمت عملی ترتیب دینی ہے، کشمیر کی لڑائی ایک طویل لڑائی ہوگی جو ہمیں دنیا کے ہر محاذ پر لڑنی ہوگی۔

شاہ محمود قریشی نے وارننگ دیتےہوئے کہا کہ اجلاس کے بعد ہم اس نتیجے پر پہنچے ہیں کہ ’بین الاقوامی توجہ ہٹانے کے لیے بھارت ایک جھوٹا آپریشن کرے، تاہم ہم بین الاقوامی برادری کو آگاہ کرنا چاہتے ہیں کہ ہم ان کے ارادوں سے واقف ہیں اور ان کی نیت پر شک ہے، تاہم ایسے میں پاکستان کے ادارے اور قوم تیار ہے۔ انہوں نے کہا کبہ ھارت نے اجلاس منعقد نہ ہونے کے لیے سر توڑ کوششیں کیں اور کیا کیا کہا ہے وہ اس وقت بتانے کا وقت نہیں ہے – عالمی عدالت انصاف (آئی سی جے) میں جانے سے متعلق انہوں نے کہا کہ وزارت قانون اور اٹارنی جنرل کی بات ہوئی ہے وہاں جانے کے محرکات پر گفتگو ہوگی، ابھی یہ پہلا اجلاس ہے چیزوں کو میز پر لایا جارہا ہے۔

وزیرخارجہ نے مزید وضاحت کرتے ہوئے کہا ہے کہ دنیا میں کشمیر کے مسئلے کو اجاگر کرنے کے لیے اہم دارالحکومتوں کی نشاندہی کی جائے گی – دنیا بھر میں پاکستان کے مختلف سفارتخانوں میں کشمیر ڈیسک کا قیام عمل میں لایا جائے گا جبکہ ان میں کشمیر سے متعلق ایک ترجمان بھی رکھا جائے گا۔ علاوہ ازیں اجلاس کے دوران وزارت خارجہ میں کشمیر سیل کے قیام کا فیصلہ بھی کیا گیا ہے جس سے متعلق وزیر خارجہ نے بتایا کہ یہ سیل کشمیر کے امور پر کڑی نظر رکھے گا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں