وکیل سےتھپڑ کھانے والی لیڈی کانسٹیبل کو معافی مانگنا پڑ گئی ، لیکن کیوں ؟؟؟

ایک طرف پولیس اپنی پیٹی بند بہن کو انصاف دلوانے میں ناکام رہے جبکہ دوسری طرف اب متاثرہ لیڈی کانسٹیبل کو ہی معذرت کرنا پڑ گئی ہے – واضح رہے کہ دو روز قبل ایک وکیل نے کارپارکنگ کے معاملہ پر لیڈی کانسٹیبل کو تھپڑ مار دیا تھا جس پر پولیس نے اس وکیل احمد
افتخار کیخلاف مقدمہ درج کر کے اسے ہتھکڑی لگا کر عدالت میں پیش کیا تھا تاہم بعد میں کیس ایک نیا رخ اختیار کر گیا ہے-

میڈیا رپورٹس کے مطا بق فیروزوالہ پولیس نے ایف آئی آر میں وکیل احمد مختار کا نام غلط تحریر کرتے ہوئے احمد افتخار لکھا جس وجہ سے اس کی ضمانت ہوگئی جس پر متاثرہ لیڈی کانسیبل فائزہ نے اپنا ایک بیان ریکارڈ کیا اور اسے سوشل میڈیا پر ڈال دیا جس پر پولہںس ایک مرتبہ پھر حرکت میں آئی اورلیڈی کانسٹیبل کو معذرت کرنے کی ہدایت کی – اس حوالے سے متاثرہ لیڈی کانسٹیبل فائزہ نے کہا ہے کہ مجھ سے غلطی ہوئی کہ میں نے فیس بک پر محکمہ کے خلاف بغیر سوچے سمجھے بولا ،وکیل سے تھپڑ کھانے والی لیڈی کانسٹیبل فائزہ نے پولیس کے شیر جوانوں سے معافی مانگ لی ہے اور اس معاملے کو ختم کر دیا ہے –

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں