جی سی یونیورسٹی کا سنڈیکیٹ اجلاس ، کونسے ڈین کیخلاف پیڈا ایکٹ کے تحت کاررائی؟؟

فیصل آباد (نیوزڈیسک)جی سی یونیورسٹی کے سنڈیکیٹ نے پلیجرازم (Plagiarism) کے کیس سے متعلق ڈاکٹر نعیم محسن(سابقہ ڈائریکٹر ڈی ایل ای) کو ذاتی حیثیت میں سنا گیا اوران کی درخواست پر چانسلر/گورنر پنجاب کو متعلقہ ٹیچر کی اپیل پر جلد فیصلہ کی استدعا کی گئی ، مزید برآں سابقہ ڈین ڈاکٹر ہمایوں عباس کا پلیجرازم (Plagiarism)کیس انکی درخواست پران کے شعبہ کے ماہر (Subject Specialist) کو بھجوانے کا فیصلہ ہوا۔اسی طرح ہائی ٹیک لیب کے کیس کے فیصلے کیلئے نئی انکوائری کرنے کا فیصلہ ہوا اور ڈین انوائرمینٹل سائنسز ڈاکٹر فرحت عباس جو کہ اس کیس میں نامزد ہیں ، کو انکی مسلسل غیر حاضری کی وجہ سے پیڈا (PEEDA)کے قانون کے تحت کاروائی کا مستحق قرار دیا گیا۔تفصیل کے مطابق گورنمنٹ کالج یونیورسٹی کا 55 واں سنڈیکیٹ اجلاس بروز منگل یونیورسٹی کے مین کیمپس میں منعقد ہوا، اجلاس کی صدارت رئیس جامعہ پروفیسر ڈاکٹر شاہد کمال نے کی، اس اجلاس کے ممبران میں شکیل شاہد (ایم پی اے)، میاں وارث عزیز (ایم پی اے)، اور محترمہ فردوس رائے (ایم پی اے) شامل تھے چیئرپرسن فیصل آباد بورڈ اور ہائر ایجوکیشن کے نمائندہ ممبر کے علاوہ یونیورسٹی کے ڈینز، ڈائریکٹرز، اور رجسٹرار بھی اجلاس میں موجود تھے، میٹنگ ہذامیں درج ذیل اہم فیصلے کئے گئے

٭ یونیورسٹی سے وابستہ وہ تمام ملازمین جو چارسال سے زائد عرصہ گزارچکے ہیں انہیں مستقل کرنے کیلئے پنجاب گورنمنٹ ریکروٹمنٹ ایکٹ کے تحت عمل درآمد کرنے کی منظوری دی گئی۔

٭ یونیورسٹی کے سلیکشن بورڈمیں ہونے والے فیصلوں کی منظوری دی گئی ۔

٭ ٹنیور ٹریک سسٹم (Tenure Track System)اساتذہ کی ترقی کے کیسز ہائرایجوکیشن کو بھجوانے کی بھی منظوری دی گئی۔مزید برآں ان اساتذہ کے مسائل کے حل کیلئے ایک کمیٹی بھی تشکیل دی گئی ۔

٭ پلیجرازم (Plagiarism) کے کیس سے متعلق ڈاکٹر نعیم محسن(سابقہ ڈائریکٹر ڈی ایل ای) کو ذاتی حیثیت میں سنا گیا اوران کی درخواست پر چانسلر/گورنر پنجاب کو متعلقہ ٹیچر کی اپیل پر جلد فیصلہ کی استدعا کی گئی ، مزید برآں سابقہ ڈین ڈاکٹر ہمایوں عباس کا پلیجرازم (Plagiarism)کیس انکی درخواست پران کے شعبہ کے ماہر (Subject Specialist) کو بھجوانے کا فیصلہ ہوا۔

٭ ہائی ٹیک لیب کے کیس کے فیصلے کیلئے نئی انکوائری کرنے کا فیصلہ ہوا اور ڈین انوائرمینٹل سائنسز ڈاکٹر فرحت عباس جو کہ اس کیس میں نامزد ہیں ، کو انکی مسلسل غیر حاضری کی وجہ سے پیڈا (PEEDA)کے قانون کے تحت کاروائی کا مستحق قرار دیا گیا۔
٭ جی سی یونیورسٹی کے ذیلی کیمپس ساہیوال اور لیہ کے مالیاتی اور تعلیمی آڈٹ کا فیصلہ ہوا تاکہ ان اداروں کے معیار کو بہتر بنایا جاسکے ۔

ٔ٭ چنیوٹ اور حافظ آباد کے سب کیمپسز میں بھرتیوں کا اختیار وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر شاہد کمال کوتفویض کر دیا گیا۔

٭ یونیورسٹی ہذا کیساتھ الحاق کیلئے ان کالجز کی درخواستوں کی منظوری دی گئی جن کا الحاق کمیٹی کی طرف سے وزٹ کیا جاچکا ہے ۔

٭ یونیورسٹی کے ساتھ ملحقہ کمیونٹی کالج کے اساتذہ کی درخواست پر ایک کمیٹی تشکیل دی گئی جو کہ ان اساتذہ کے ترقی کے معاملات میں بہتری لانے کیلئے اپنی سفارشات مرتب کرے گی۔

سنڈیکیٹ اجلاس خوشگوار ماحول میں منعقد ہوا یونیورسٹی ہذا کی بہتری کیلئے کوشاں رہنے کے عزم کیساتھ اجلاس اختتام پذیر ہوا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں