آن لائن گیم پب جی کھیلنے والا 12 سالہ بچہ ہارٹ اٹیک سے چل بسا ، ڈاکٹرزکا کیا کہنا ہے؟؟؟

مصر ، انٹرنیشنل نیوز ڈیسک

آن لائن گیم پب جی کے کھیلنے والے نوجوان مختلف سماجی اور نفسیاتی مسائل کا شکار ہو رہے ہیں اور کئی بچوں نے تو اس گیم کو کھیلنے سے روکنے پر خود کشی تک کر لی ہے لیکن اب ایک نیا واقعہ سامنے آیا ہے جس میں بتایا گیا ہے کہ آن لائن گیم بپ جی کھیلنے کے دوران 12 سالہ مصری بچے کی موت واقع ہو گئی ہے-

میڈیا رپورٹس کے مطابق متوفی نوجوان کے اہل خانہ جب کمرے میں داخل ہوئے تو انہیں بچہ بے ہوشی کی حالت میں ملا، جس کے برابر میں موبائل پڑا تھا اور اُس میں پب جی گیم چل رہی تھی – جس کے بعد 12 سالہ بچے کو اہل خانہ بے ہوشی کی حالت میں السلام انٹرنیشنل اسپتال لے کر پہنچے جہاں پر ڈاکٹرز نے بچے کی موت کی تصدیق کی اور انتقال کی وجہ جاننے کے لیے چند ٹیسٹ کیے۔

اس حوالے سے ڈاکٹرز کا کہنا تھا کہ ہ بچے کا بلڈپریشر بڑھا جس کی وجہ سے اُسے ہارٹ اٹیک ہوا اور یہی موت کی وجہ بنا۔ واقعہ کے بعد بچے کا والد نے بتایا کہ ’ہم جب بالکونی میں داخل ہوئے تو وہاں خون پڑا ہوا تھا، کمرے میں جاکر دیکھا تو بیٹے کی ناک، چہرے اور گردن سے خون بہہ رہا تھا جبکہ اُس کا جسم نیلا پڑا ہوا تھا‘۔ اسی طرح پبلک پراسیکیویشن نے واقعے کی تحقیقات کے لیے ایک ٹیم تشکیل دے دی جبکہ بچے کے جسد خاکی کو مردہ خانہ منتقل کردیا، انتقال کی وجہ جاننے کے لیے فرانزک ٹیسٹ کیا جائے گا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں