گھریلو ملازم بچے! ……………………….. تحریر، تنویر بیتاب

گھریلو ملازمہ صدف بڑی خوش قسمت بچی ہے کہ اُس پر تشدد سر عام ہوا اور وہ سوشل میڈیا کے زریعے عام ہوا جس پر پولیس ایکشن میں آئ ، مجرم پکڑا گیا ۔اگر یہی تشدد گھر کے اندر ہوتا تو کسی کو کہاں پتہ چلنا تھا کہ صدف کے ساتھ کیا ہوا ؟

ہمارے ہاں چائلڈ لیبر عام ہے ۔ آٹو ورکشاپس ، دُکانیں ، ریسٹورنٹس ، فیکٹریاں ، کون سی جگہ ہے جہاں کم سُن بچے انتہائ کم اُجرت پر پُر مُشقت کام نہیں کرتے ۔ یہ بچے آپ سب کو تو دکھائ دے سکتے ہیں مگر لیبر ڈیپارٹمنٹ اور چائلڈ پروٹیکشن کے اہلکاروں اور افسران کو کبھی نظر نہیں آتے کیونکہ اُن کی آنکھوں پر رشوت کے نوٹوں کی پٹی جو بندھی رہتی ہے ۔ اُن تمام بچوں سے نہ صرف بے تحاشہ کام لیا جاتا ہے بلکہ اُن پر تشدد بھی کیا جاتا ہے ۔ کوئ خوش قسمت بچہ ہی ہو گا جو اُن جگہوں پر جنسی تشدد سے محفوظ رہتا ہو۔

چائلڈ لیبر کے شکار بچوں میں گھریلو ملازم بچے مظلوم ترین ہیں ۔ دور دراز کے دیہات سے لائے گئے یہ بچے چوبیس گھنٹے کے ملازم ہوتے ہیں۔ ان کے کام کے اوقات صبح فجر کے وقت ہی شروع ہو جاتے ہیں اور رات گئے تک یہ بچے کام کاج میں مصروف رہتے ہیں۔ انہیں نہ تو مناسب خوراک دی جاتی ہے اور نہ ہی آرام کے لئے وقت ۔ ان کے کھیل کود کے وقت کا تو سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔ ان بچوں کو معمولی معمولی غلطیوں پر شدید تشدد کا نشانہ بنایا جاتا ہے جسکے نتیجے میں بہت سے بچے جان سے ہی چلے جاتے ہیں۔ گھریلو ملازم بچوں کو اہل خانہ ، اُن کے رشتہ داروں ، دوست احباب ، ہمسایوں حتی کہ محلے کے سکیورٹی گاردز تک جنسی زیادتی کا نشانہ بناتے ہیں ۔ ایسے معاملات کبھی بھی منظر عام پر نہیں آتے ۔ اگر صدف جیسے خوش قسمت کا معاملہ سامنے آ بھی جائے تو کسی بھی مُجرم کو قرار واقعی سزا نہیں ملتی جس سے ایسے لوگوں کے حوصلے بُلند ہوتے ہیں۔

چائلڈ لیبر کو ختم کرنے کے بلنگ و بانگ دعوے تو سبھی حکومتیں کرتی رہی ہیں مگر عملا آج تک اس معاملے میں کسی بھی حکومت نے سنجیدہ کوشش کی ہی نہیں۔

ضرورت اس امر کی ہے کہ چائلڈ لیبر کے خاتمے کے لئے سخت ترین اقدامات اُٹھائے جائیں ۔ اگر ایسا کرنا ممکن نہ ہو تو پھر چائلڈ لیبر کے لئے بھی قانون سازی کی جائے جس کے تحت کم سن ملازم بچوں کے کام کے اوقات کار اور اُن کی اُجرتوں کا تعین کیا جائے۔ اُنہیں ہر طرح کے زہنی، جسمانی اور جنسی تشدد سے محفوظ کیا جائے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں