پولیس افسران کے فرنٹ مین جو منتھلی اکٹھے کرتے تھے ، کتنے کانسٹیبل قابو میں‌ آ گئے؟؟؟

فیصل آباد ، قمر مرزا

فیصل آباد پولیس کے مختلف تھانوں کے ایسے اہلکار جو اپنے افسران کے لئے منتھلی اکٹھی کرتے تھے قابو میں آ گئے ہیں اور ایسے 7 افراد کے خلاف مقدمہ درج کرکے گرفتار کر لیا گیا ہے اور ان کی فائلیں پولیس لائنز طلب کر لی گئی ہیں –

تفصیل کے مطابق چند روز قبل ضلعی پولیس کے اعلی آفیسرز کی میٹنگ میں ٹاوٹ پولیس اہلکاروں کو نشان عبرت بنانے کی حکمت عملی مرتب کی گئی جس پر ٹاوٹ مافیا پولیس اہلکاروں کی فہرست مرتب کرکے ان کو پابند سلاسل کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے جس پر فوری عملدرآمد کرنے کی ہدایت بھی کی گئی ہے جس پر ضلع بھر کے ٹاون ایس پیز اپنے ٹاون میں موجود تھانوں میں پولیس ٹاوٹ ملازمین کیخلاف مقدمات درج کروائیں گئے اور مقدمات کے مدعی ایس ایچ اوز اور انچارج انوسٹی گیشن آفیسرز ہوگئے –

اس حوالے سے انسپکٹر وحید شاہد ایس ایچ اوز تھانہ غلام محمد آباد کی مدعیت میں گزشتہ روز ایک مقدمہ درج کیا گیا ہے جس میں ایس ایچ اوز کی جانب سے استغاثہ میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ کانسٹیبل محمد یاسر، پیپلزکالونی سے یاسر حمید، ساہیانوالہ سے شہزاد انجم، افضل احمد، لنڈیانوالہ سے شاہد غفار، مرید والا سے حافظ تنویر جبکہ سٹی تاندلیانوالہ سے کانسٹیبل آصف کے خلاف مقدمات درج کرکے ان کے خلاف الگ الگ مقدمات درج کرکے ان کو پابند سلاسل کردیا گیا ہے جن کو افسران نے معطل کرکے پولیس لائن رپورٹ کرنے کا حکم دیا ہے یہ پولیس اہلکات ابھی بھی اپنے تھانوں کی حدود سے منتھلی اکھٹی کرتا ہے اور ٹاوٹ مافیا کے طور پر کام بھی کرتا تھے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں