فیصل آباد ، دولت کے نشہ میں دھت مالکان کا 11 سالہ گھریلوملازمہ پر تشدد ، لیکن کس طرح ظلم کیا؟؟

فیصل آباد ، قمر مرزا

پاکستان کا تیسرا بڑا شہر فیصل آباد مصوم گھریلو ملازم بچوں پر تشدد کی آماجگاہ بن گیا دولت کے نشہ میں دھت مالکن کا 11سالہ گھریلو ملازمہ پر تشدد ،جلاد مالکن بچی کو بھوکا پیاسا قید جبکہ زیادہ سونے اور چھوٹی چھوٹی غلطیوں پر گرم چمٹے سے اسکا جسم داغتی رہی،تشدد سے خوفزدہ بچی فرار ہونے کے بعد چائلڈ پروٹیکشن بیورو پہنچ گئی-

بتایا گیا ہے کہ پنڈی بھٹیاں کے رہائشی ممتاز نے بیوی کی وفات کے بعد دوسری شادی جبکہ اپنی گیارہ سالہ بیٹی صدف کو چنیوٹ میں اپنی بہن کے پاس چھوڑ دیا جہاں سے اسکی بہن نے چھ ماہ قبل صدف کو مدینہ ٹاون کینال پارک کے ریائشی شیخ عرفان کے گھر چار ہزار ماہوار پر گھریلو ملزمہ رکھوا دیا جہاں سے چھ ماہ بعد فرار ہونے والی گیارہ سالہ صدف کے مطابق شیخ عرفان کی بیوی مصباح اسے بھوکا پیاسا قید رکھ کر رات دیر تک جگا کر کام کاج کرواتی اور صبح لیٹ اٹھنے اور چھوٹی چھوٹی غلطیوں پر تشدد اور لوہے کے گرم چمٹے سے اسکا جسم داغتی رہی جس سے اسکا جسم لاغر اور تشدد کا راز چھپانے کے لیے چھ ماہ سے اسے گھر والوں سے ملنے نہیں دیا گیا اور گذشتہ روز وہ موقع پاکر فرار جبکہ اطلاع ملنے پر چائلڈ پروٹیکشن بیورو نے تشدد کی شکار بچی کو اپنی تحویل میں لے لیا-

اس حوالہ سے رابطہ کرنے پر چائلڈ پروٹیکشن بیورو کے آفیسر رفعت عباس کا کہنا تھا کہ گیارہ سالہ متاثرہ صدف کو چائلڈ پروٹیکشن نے اپنی تحویل میں۔لے لیا ہے متاثرہ بچی کی کمر اور جسم کے متعدد حصوں پر تشدد کے نئے اور پرانے نشانات موجود ہیں تاہم تھانہ مدینہ ٹاون میں ملزمان کے خلاف مقدمہ درج جبکہ متاثرہ بچی کو میڈیکل اور دیگر علاج معالجہ کے لیے سول ہسپتال منتقل کر دیا گیا ہے ذرائع کی جانب سے معصوم بچی پر تشدد اور ظلم میں ملوث ملزمہ مصباح فیصل آباد کے ایک معروف صنعتکار کی بیٹی بتائی جاتی ہے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں