کرونا کے باعث سکولوں کی بندش کے خلاف پرائیویٹ سکولز ایسوسی ایشن سراپا احتجاج

اسلام آباد ، مبشر اقبال بشیر

آل پاکستان پرائیویٹ سکولز مینجمنٹ ایسوسی ایشن خواتین ونگ کی سینکڑوں اساتذہ کا سکولوں کی بندش کے فیصلے کے خلاف مری روڈ پراحتجاجی مظاہرہ کیا اور سی۔ای۔او ایجوکیشن آفس کے سامنے دھرنا دیا – اس موقع پر ابرار احمد ۔مبشر اقبال بشیر۔ وسیم شیرازی۔ انجیٸر خالد چڈھر۔ علی محمد بھاولپوری۔جاوید اعجاز گورایہ۔ حافظ طاہر ۔عمران نواز ۔مظہر چوہان ۔ عرفان ڈوگر۔ محمد متعین سپریم سکول۔ میڈم سکینہ تاج۔ میڈ م بشری بخاری۔ میڈ م نورین۔ میڈم بسم الله۔ میڈم فرخندہ کا احتجا ج-

احتجاجی مظاہرہ سے خطاب کرتے ہوئے سکینہ تاج کا کہنا تھا کہ کورونا کے پھیلاؤ کے ذمہ دار تعلیمی ادارے نہیں وہ تو ایک ماہ سے بند ہیں۔ 25ہزار تعلیمی ادارے مستقل بند ہوچکے ہیں۔آؤٹ آف سکولز بچوں کی تعداد میں غیرمعمولی اضافہ ہے – نجی تعلیمی شعبہ اس وقت نازک ترین صورتحال سے گزر رہا ہے۔ حکومت نے اس شعبہ کو تباہ کرنے میں کوئی کسر نہیں چھوڑی ۔ تعلیمی سرگرمیاں بحال کرنے کے لیے اساتذہ اور طلبہ کی فوری ویکسینیشن کی حکمت عملی وضع کی جاۓ۔

مقررین نے واضح کیا کہ 11 اپریل کو تعلیمی ادارے نہ کھولے تو پھر ہمارا رخ ڈی۔چوک اسلام آباد کی طرف ہوگا۔ وفاقی وزیر تعلیم شفقت محمود تباہ حال نجی تعلیمی اداروں کی بحالی کے لیے بلاسود قرض جاری کرنے کے وعدہ کو پورا کریں۔ حکومت تعلیمی سرگرمیاں جاری رکھنے کے لیے سمارٹ لاک ڈاؤن جیسے فوری اقدامات کرے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں