سی پی ڈی آئی اور خیبر پختونخوا اسمبلی کے خواتین پارلیمانی گروپ کے مابین معاہدہ؟؟

اسلام آباد ، ثنا رئوف بھٹی

سی پی ڈی آئی اور خیبر پختونخوا اسمبلی کے خواتین پارلیمانی گروپ نے قانون کی حکمرانی کو فروغ دینے اور خواتین کے عمومی و خصوصی حقوق سے متعلق قانون سازی میں مشاورت اور تکنیکی معاونت کے لیے مفاہمت کی یادداشت پر دستخط کئے۔

سی پی ڈی آئی اور خبری پختونخوا اسمبلی کے خواتن پارلماننی گروپ نےصوبہ خیبر پختونخوا میں صنفی مساوات کو بہتر کرنے، خواتین کو بااختیار بنانے، اسمبلی میں قانون سازی کے عمل میں خواتین کی رائے اورشمولیت کو یقینی بنانے اور ایک نئی جہد کے ساتھ قانون کی حکمرانی کے لئے اقدامات کرنے اورصوبہ خیبرپختونخوا میں مقامی حکومتوں کے جلد انتخابات کے لئے مشترکہ کاوشیں کرنے پر اتفاقِ رائے ہوا۔ ایسی مشترکہ کاوشیں صوبائی حکومتی اداروں کے لئے مؤثر پالیسیاں اور ایکشن پلانز مرتب کرنے میں معاونت فراہم کرے گی ۔ جن کے ذریعہ ان حکومتی اداروں کی صلاحیتوں کو بڑھانے اور خود احتسابی کےایسے نظام کے قیام میں مدد ملے گی ۔ جن سے حکومتی ادارے معاشرے کے پسماندہ گروہوں، خصوصاًخواتین سمیت حالیہ ضم شدہ اضلاع سےتعلق رکھنے والے افراد کے حقوق (مثلاً سماجی ، معاشی ، سیاسی ، اور انصاف تک رسائی)کے تحفظ ، اُن کے فعال ہونے اور ان حقوق کو فروغ دینے میںمدد مل سکے گی۔

مفاہمتی یاداشت پر دستخط کی تقریب کے دوران ،خیبرپختونخوا اسمبلی کے ڈپٹی اسپیکر اورخواتنی پارلمانی گروپ کے سرپرست اعلٰی محمود جان نے کہا کہ ” خواتین کو معاشرے میں بااختیار بنانے کا مرکزی خیال رکھتے ہوئے ، سی پی ڈی آئی اورخبرڈ پختونخوا اسمبلی کے خواتنم پارلمارنی گروپ(ڈبلیو پی سی -کے پی ) کے درمیان شراکت داری خواتین کے لئے بہتر قانون سازی کرنے اورصوبے بھر کے ساتھ ساتھ محروم قبائلی علاقوں(حالیہ ضم شدہ اضلاع)میں ان قوانین نفاذ میں مدد گار ثابت گی۔”ٗ ”
اس موقع پر مختار احمد علی ، ایگزیکٹو ڈائریکٹر ، سی پی ڈی آئی نے صوبہ خیبرپختونخوا میں خواتین کے حقوق کے قوانین اور خواتین کی تعلیم کو آگے بڑھانے میں خبر پختونخوا اسمبلی کے خواتن پارلماعنی گروپ(ڈبلیو پی سی -کے پی )کی کوششوں کا اعتراف کیا اور کہا کہ مشترکہ کوششیں خواتین اور لڑکیوں کے حقوق کو سمجھنے اور ان کے تحفظ یقینی بنانے میں اہم ثابت ہوں گی۔ سی پی ڈی آئی کے صوبہ خیبر پختونخوا میں ماضی ِحال کے کاموں پر روشنی ڈالتے ہوئے اُنہوں نےکہا کہ خیبر پختونخوا کےمقامی حکومتوں کے نظام کو مضبوط بنانے اور مقامی حکومت کے ادارہ کی پالیسیوں کے بہتر نفاذ اور درپیش مسائل پر قابو پانے کے لیےسی پی ڈی آئینے ڈبلیو پی سی -کے پی کی مدد کو خدمات فراہم کیں۔ اور اب ، ہم قوانین اور پالیسیوں کے مؤثر نفاذ کی وکالت کرتے ہوئے ایک قدم مزید آگے بڑھ رہے ہیں۔

اس مفاہمتی یاداشت کے تحت ، سی پی ڈی آئی مقامی حکومت کے بارے میں خیبر پختونخوا اسمبلی کی اسٹینڈنگ کمیٹی ، حالیہ ضم شدہ اضلاعمیں خواتین کے حقوق کے قوانین کی توسیع اور قانون سازی کے عمل کو مضبوط بنانے میں خبرق پختونخوا اسمبلی کے خواتنا پارلماننی گروپکی حمایت کرے گی۔ قانون سازوں اور عملے کی صلاحیت میں اضافے کے ذریعے( گڈ گورننس)بہتر حکومتی طرزِعمل کے فروغ کے لیے خدمات کی فراہمی میں اضافہ کیا جائے گا، صنفی تحقیق ، خواتین کے حامی قوانین کا مسودہ ، قراردادیں ، اعلانات اور رپورٹیں تیار کی جائیں گی۔

مزید یہ کہ ، سی پی ڈی آئی اور خبر پختونخوا اسمبلی کے خواتنت پارلمامنی گروپ، مقامی حکومت کے نمائندوں ، ڈبلیو پی سی کے ممبران ، پارلیمنٹیرینز اور سیاسی جماعتوں کی تربیت اور استظاعت کاربڑھانے کے لیے مل کر کام کریں گے تاکہ قانون کی حکمرانی کو مضبوط بناکرمختلف مسائل کو بہتر طور پر سمجھ سکیں اور ان پر قابو پانے کے لیے مشترکہ کوششیں کرسکیں۔

اختتامی خطاب میں ” ڈپٹی سپیکر خیبر پختونخوا صوبائی اسمبلی جان نے کہا۔کہ سماجی ترقیاتی شعبہ اور حکومت ایک ہی گاڑی کے دو پہیے ہیں جو مل کراصلاحی نظام کو چلاتے ہیں، اور ہممل کر ہی تبدیلی لا سکتے ہیں۔سی پی ڈی آئی کے ساتھ شراکت داری کا مقصد صنفی مساوات ، بہتر طرزِ حکمرانی ، بہتر قانون سازی اور خواتین کو بااختیار بنانا ہے”۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں