موٹر وے پر گوجرہ انٹرچینج کے قریب لڑکی سے اجتماعی زیادتی کا ایک اور کیس ؟؟

گوجرہ ، نیوز ڈیسک

فیصل آباد گوجرہ موٹر وے ایم فور پر کار میں 18 سالہ لڑکی کو نوکری کا جھانسہ دے کر اجتماعی زیادتی کا نشانہ بنایا گیا ہے جس پر مقامی پولیس نے خاتون سمیت 3 ملزمان کے خلاف مقدمہ درج کر لیا ہے جس کے بعد 2 ملزمان کو گرفتار کر لیا گیا ہے جبکہ خاتون ملزمہ ابھی تک فرار ہیں – پولیس نے مبینہ طورپر زیادتی میں استعمال ہونے والی گاڑی کو بھی برآمد کر کے قبضہ میں لے لیا – وزیراعلی پنجاب نے زیادتی کیس میں ملزمان کو جلد گرفتار کرنے کا حکم جاری کیا ہے جبکہ آئی جی پنجاب نے ریجنل پولیس آفیسر فیصل آباد سے واقعہ کی رپورٹ طلب کر لی ہے

تھانہ سٹی میں درج کروائے گئے مقدمہ کے مطابق ملزمان نے ٹوبہ ٹیک سنگھ کی 18 سالہ لڑکی کو بوتیک پر نوکری کا جھانسہ دے کر گوجرہ بلایا تھا اور ملزمان نے فیصل آباد گوجرہ موٹر وے ایم فور پر کار میں لڑکی کو اجتماعی زیادتی کا نشانہ بنایا اور بعد میں فیصل آباد انٹر چینج پر پھینک کر فرار ہو گئے – اس بارے متاثرہ لڑکی کی خالہ نے بتایا کہ اس کی بھانجی کو فون پر میسج کرکے انٹرویو کیلئے گوجرہ بلوایا گیا تھا، ٹوبہ ٹیک سنگھ سےگوجرہ پہنچنے پر ملزمان نےکہا بھانجی کو انٹرویو کیلئے ساتھ بھیج دیں۔ متاثرہ لڑکی کی خالہ نے ایف آئی آر میں بتایا کہ جس گاڑی میں بھانجی کو لے جایا گیا اس میں ایک خاتون اور دو مرد تھے، ملزمان نے موٹر وے پر میری بھانجی کو اجتماعی زیادتی کا نشانہ بنایا اور اسے فیصل آباد انٹرچینج پرپھینک کر چلے گئے۔

اس حوالےڈی ایس پی وقار احمد کا کہنا ہے کہ لڑکی سے زیادتی کے واقعےکے 3 ملزمان ہیں جو گاڑی پر آئے تھے، گاڑی میں 2 لڑکے اور ایک لڑکی تھی جس نے متاثرہ لڑکی کو میسج کیا تھا۔ انہوں نے مزید کہا کہ لڑکی نے ملزمان کے نام نہیں بتائے، گاڑی کا نمبربھی نہیں ہے، ملزمان لڑکی کو فیصل آبادکےکسی بوتیک میں نوکری کاکہہ کرلےگئےتھے۔ مقامی پولیس حکام نے بتایا کہ متاثرہ لڑکی کا میڈیکل کروا لیاگیا ہے جس میں لڑکی کے ساتھ اجتماعی زیادتی تصدیق ہو گئی ہے اور اب متاثرہ لڑکی کا ڈی این اے کروایا جا رہا ہے اور نمونے لاہور بھجوا دیے گئے ہیں۔

ڈسٹرکٹ ہیڈکوارٹرز ہسپتال کے میڈیکل سپرنٹنڈنٹ ڈاکٹر مسعود نے متاثرہ لڑکی کی میڈیکل رپورٹ بارے بتایا کہ میڈیکل رپورٹ کے مطابق لڑکی سے زیادتی کی تصدیق ہو گئی ہے جبکہ رپورٹ میں لڑکی کے جسم کے مختلف حصوں پر تشدد کیا گیا ہے جس کی وجہ سے لڑکی کے جسم پر نشانات بھی موجود ہیں –

مقامی پولیس نے ملزمان میں سے دونوں ملزمان حماد اور عبدالرحمان کو گرفتار کر لیا ہے اور اس سے مزید تفتیش کی جارہی ہے جبکہ خاتون ملزمہ لائبہ ابھی تک فرار ہیں – اسی طرح زیادتی میں استعمال ہونے والی کار نمبر اے ایس ایچ 043 کو بھی برآمد کر کے قبضہ میں لے لیا گیا ہے جبکہ خاتون ملزمہ کی گرفتاری کے لئے چھاپہ مار ٹیمیں تشکیل دیدی ہیں –

وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار نے بھی فیصل آباد گوجرہ موٹر وے ایم فور پر لڑکی سے مبینہ زیادتی کے واقعہ کا نوٹس لیتے ہوئے آر پی او فیصل آباد عمران محمود سے رپورٹ طلب کر لی اور ملزمان کی فوری گرفتاری کا حکم دیا ہے۔ آئی جی پنجاب راؤ سردار نے گوجرہ موٹر وے پر کار میں لڑکی سے مبینہ زیادتی کے واقعہ کا نوٹس لیتے ہوئے آر پی او فیصل آباد کو ملزمان کی جلد گرفتاری کا حکم دیا ہے- آئی جی پنجاب نے ملزمان کی جلد گرفتاری اور سخت قانونی کارروائی کا حکم دیتے ہوئے کہا کہ متاثرہ لڑکی کو انصاف کی فراہمی ترجیحی بنیادوں پر یقینی بنائی جائے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں